صاحب عشق و وفا ہیں حضرتِ اختر رضا

 محمد عیسیٰ رضوی قادری نیرؔ، قنوج ،یوپی ،ہند


پرتو احمد رضا ہیں حضرتِ اختر رضا
جانشین مصطفی ہیں حضرتِ اختر رضا

چہرۂ زیبا سے ظاہر ہے ولایت کا نشاں
بالیقیں حق کی عطا ہیں حضرتِ اختر رضا

جس کے گھر سے بھیک لیتے ہیں گدا و بادشاہ
ہاں وہی گنج عطا ہیں حضرتِ اختر رضا

طلعت اقدس پہ گویا مسکراتا ہے شفق
نوری کرنوں کی ضیاء ہیں حضرت اختر رضا

جس کی شمع زندگی سے لاکھوں گھر روشن ہوئے
وہ چراغ رہنما ہیں حضرتِ اختر رضا

جس کی خوشبو سے معطر اہل یورپ ،ایشیا
ایک ایسا گل کدہ ہیں حضرتِ اختر رضا

محفل علم و ادب ہے آج ان سے پر ضیاء
بزم سنت کے دیاہیں حضرتِ اختر رضا

عاشق خیر الوریٰ کے عشق کی میراث سے
صاحب عشق و وفا ہیں حضرتِ اختر رضا

جلوۂ حامد رضا و مصطفی کے رنگ سے
باخدا نوری ضیاء ہیں حضرتِ اختر رضا

بے نشانوں کو ملا ان سے سراغ زندگی
حق کی منزل کا پتہ ہیں حضرتِ اختر رضا

پاسبانِ مسلکِ احمد رضا کہئے انہیں
سنیوں کے پیشوا ہیں حضرتِ اختر رضا

کتنے بھٹکوں کو ملی ہے منزلِ راہِ نجات
ہادیٔ راہِ ہدیٰ ہیں حضرتِ اختر رضا

گلشنِ احمد رضا ہے جس کے دم سے لالہ زار
وہ بہار پُر فضا ہیں حضرتِ اختر رضا

نیرؔ عاجز بیاں کیا کیا کرے وصف جمیل
خود خدا جانے کہ کیا ہیں حضرتِ اختر رضا

Menu
error: Content is protected !!