کلامِ رضاؔ بریلوی علیہ الرحمہ

’’لَم یَاتِ نَظیرُکَ فِی نَظَرٍ مثل تو نہ شد پیدا جانا ‘‘

تضمین نگار: علامہ خالد روؔمی چشتی نظامی

فِی الّیلِ لَمَا غَیرُکْ قَمَرٍ برچرخِ ندا ہمہ جا جانا
فِی الکَھفِ بَلاَ اَنتُم اَثَرٍ در درد و الم چو دوا جانا
اِن حُبُّکَ فِی شَجَرٍ حَجَرٍ چوں خَلق را عُقدہ کُشا جانا

لَم یَاتِ نَظیرُکَ فِی نَظَرٍ مثل تو نہ شد پیدا جانا
جگ راج کو تاج تورے سر سوہے تجھ کو شہ دوسرا جانا

دیکھا بھالا عالم سارا، ترے جیسا کسی ماں نے نہ جنا
اَزْکَی النَّسَبٖ اَعْلٰی الْحَسَبٖ، حسّان کا بھی ہے قول بجا
جب خوب اس دل کا تسلٰی ہُوا، بے ساختہ پھر یہ کہنا پڑا

لَم یَاتِ نَظیرُکَ فِی نَظَر مثل تو نہ شد پیدا جانا
جگ راج کو تاج تورے سر سوہے تجھ کو شہ دوسرا جانا

اَناَ بِتَّیْبِ فِی غِیلِ ھَوٰی یابم نہ کسے جا جنسِ وفا
کُلُّ یَوم ٍ غَسَقِ الْاَدْھٰی منِ بے سروپا و کنم گریہ
مَن ذَالَّذِی مُونِسُ فِی الدُّنْیَا ہر گام روم چو خجل تنہا

اَلبحرُ عَلاَوالموَجُ طغیٰمن بیکس و طوفاں ہوشربا
منجدھار میں ہوں بگڑی ہے ہوا موری نیا پار لگا جانا

اِنِّی فِی غَابَۃِ ھَم بِغَشِی بیم ترا با درماں طلبی
فِی غَینُ انْصُرنِی وَامْدُدْنِی اے چارہ گرِ من چارہ توئی
لَم یاْتِ اَسیرٗ فِی غَلِّی پئے خواجہ بگو غمِ تشنہ لبی

یَا شَمسُ نَظَرتِ اِلیٰ لیَلیِ چو بطیبہ رسی عرضے بکنی
توری جوت کی جھلجھل جگ میں رچی مری شب نے نہ دن ہونا جانا

تو روحِ سخن تو جانِ غزل، اے نثرابد اے نظمِ ازل
ہر ایک ادا حسنِ اجمل، ہر وصف ترا کامل اکمل
اے مشعرِ دیں میقاتِ عمل، اے حُسن کی لم یزلی مشعل

لَکَ بَدر فِی الوجہِ الاجَمل خط ہالہ مہ زلف ابر اجل
تورے چندن چندر پروکنڈل رحمت کی بھرن برسا جانا

اَنَا جَامِحُ طَاغِی بِوَصْفِ صَمَمْ بر تُست ہُویدا چو منظرِ غم
اَنتُم نُورٗ فِی لَیلِ ظَلَمْ اے مہرِ ھدٰی اے ماہِ کرم
لَا غَیرُکَ مُونِسُ لِی فِی الْھَم گویم بکسے ایں درد و الم

انا فِی عَطَش وّسَخَاک اَتَم اے گیسوئے پاک اے ابرِ کرم
برسن ہارے رم جھم رم جھم دو بوند ادھر بھی گرا جانا

یَا سِرُّ اِجَابَۃِ بابِ حَرَم اے وحی و رسالت را خاتم
یا صَاحِبُ اٰیَتِ نُونُ قَلَم اے تکیہ نشیںِ ملکِ نِعَم
یا دَافِعُ قَحطِ مَرْضِ اَلَم بر حالِ غریباں چشمِ کرم

انا فِی عَطَش وّسَخَاک اَتَم اے گیسوئے پاک اے ابرِ کرم
برسن ہارے رم جھم رم جھم دو بوند ادھر بھی گرا جانا

تَمشِیکَ لَناَ سَمُّ الْمُہلَک آید بدلِ ما درد و کسک
بِعُجُومِ بَلا نَفسٗ فِی الشَّک بینم چو بَہَر جا حُزنِ دَک
اِنِّی فِی الغَرْمِ مِنْ رِحْلَک ایں ظلم مکن بر عبدِ سُبک

یَا قاَفِلَتیِ زِیدَی اَجَلَک رحمے برحسرت تشنہ لبک
مورا جیرا لرجے درک درک طیبہ سے ابھی نہ سنا جانا

فِی الدَّھْرِ عِشقُ بِہٖ وَاثَبَتْ ظاہر شدہ چوں حالِ وحشت
فِی النّارِ ھَوٰی قَلْبٗ حَرَقَت گویم چہ بجلوہءِ بے صورت
قَد نَفسِ عَجِیلُ لَنا خَجَلَتْ یک لحظہ نداد مَرا مہلت

وَاھا لسُویعات ذَھَبت آں عہد حضور بار گہت
جب یاد آوت موہے کر نہ پرت دردا وہ مدینہ کا جانا

فِی السِّجْنِ الْعِشْقِ اَنَا مَجْنُوں دیوانہ وش و مدہوش جنوں
لَا رَاحَۃِ فِیہِ لِلْمَسْجُوں بے تاب و تواں باحالِ زبوں
لَا مُعْطِیَ صَبْرِ لِلمَطْعُوں داند نہ کسے مَرا سوزِ دروں

اَلقلبُ شَج وّالھمُّ شجوُں دل زار چناں جاں زیر چنوں
پت اپنی بپت میں کاسے کہوں مرا کون ہے تیرے سوا جانا

فَمُحَمّدُنا ھُوَ سَیِّدُنَا شُنوم چو زعہدِ طفلی مَرا
فَلَہُ لَا صَامَ وَلَا صَلّٰی شخصے کہ بَر اُو گشتہ نہ فدا
یَا صِاحِبُ اَقرَبُ اَولٰنَا اے بادشہِ لولاکَ لَمَا

اَلروح فداک فزد حرقا یک شعلہ دگر برزن عشقا
مورا تن من دھن سب پھونک دیا یہ جان بھی پیارے جلا جانا

لے، رومؔی ہے وہ جلوہ نما، بے رنگ کی رنگت دیکھ ذرا!
گستاخ نہ بن یہ لاف ہے کیا؟ تو کون ہے دم مارے اس جا
چُپ اے مردِ بیباک نوا، سرتابقدم پُر عیب و خطا

بس! خامہ خام نوائے رؔضا نہ یہ طرز میری نہ یہ رنگ مرا
ارشاد احبا ناطق تھا ناچار اس راہ پڑا جانا

Menu
error: Content is protected !!