کلامِ رضاؔ بریلوی علیہ الرحمہ

یاد میں جس کی نہیں ہوشِ تن و جاں ہم کو

 تضمین نگار: صاحبزادہ ابو الحسن واحد رضوی

صبر کا اب تو نظر آئے نہ امکاں ہم کو
‎کب تلک جلوہ نظر آئیگا ’’پنہاں‘‘ ہم کو
‎گِریہ زَن ہجر سے ہیں کیجیو! خنداں ہم کو

‎’’یاد میں جس کی نہیں ہوشِ تن و جاں ہم کو
‎پھر دِکھا دے وہ رُخ اے مہرِ فروزاں ہم کو‘‘

‎ذوق والوں کی یہ دنیا ہے وُہی اِس میں گُمیں
‎اہلِ دل جانیں اِسے، اہلِ نظر ہی سمجھیں
‎کیف و مستی کا جو عالَم ہے بھلا کس سے کہی

’’دیر سے آپ میں آنا نہیں ملتا ہے ہمیں
‎کیا ہی خود رفتہ کیا جلوۂِ جاناں ہم کو‘‘

درد و آلام کے ماروں کو مِلی جس سے خوشی
‎غم ہُوا جس سے غلط، راحت و تفریح مِلی
‎جس سے تسکین مِلی، جس سے کلی دل کی کِھل

’’جس تَبَسّم نے گلستاں پہ گرائی بجلی
‎پھر دِکھا دے وہ ادائے گلِ خنداں ہم کو‘‘

‎دولتِ دید کا ہر دم رہے بن کر سائل
‎تیرِ الفت سے رہے لحظہ بہ لحظہ گھائل
‎ہر گھڑی یادِ مدینہ میں رہے وہ بسم

’’کاش آویزۂِ قندیلِ مدینہ ہو وہ دل
‎جس کی سوزش نے کیا رشکِ چراغاں ہم کو‘‘

‎تیری رفتار پہ ہر سرعتِ رفتار فدا
‎آج تک جس کا کسی کو نہیں ادراک ہُوا
‎برق رفتار کوئی تجھ سا نہ دیکھا نہ سن

’’عرش جس خوبیِ رفتار کا پامال ہُوا
‎دو قدم چل کے دکھا سروِ خراماں ہم کو‘‘

‎کب تلک گل سے رہے بلبلِ بسمل یوں دُور
‎کب تمنا مِری بَر آئیگی، بخشے گی سُرور
‎کب کھلے گی مِری قسمت کہ نظر آئے وہ نُور

’’شمعِ طیبہ سے میں پروانہ رہوں کب تک دُور
‎ہاں جلا دے شررِ آتشِ پنہاں ہم کو‘‘

‎ناسزا فعل نہ مجھ سے کوئی ایسا ہوگا
‎میں نےسوچا بھی نہیں ہے کبھی گستاخی کا
‎ڈر یہی ہے خلل آرام میں آجائیگ

’’خوف ہے سمع خراشیِ سگِ طیبہ کا
‎ورنہ کیا یاد نہیں نالۂ افغاں ہم کو‘‘

‎پورے ارمان ہوں اب تو مِری قسمت کھل جائے
‎دُوریاں ختم ہوں قربت کا مزا آجائے
‎خاص ہو لطف، تمنائے دِلی بَرآئے

’’خاک ہو جائیں درِ پاک پہ حسرت مِٹ جائے
‎یا الہی! نہ پھرا بے سروساماں ہم کو‘‘

درد جو مجھ کو میسر ہے وہ ہر اِک کو نہیں
‎یہ عجب درد ہے، اس میں ہے بلا کی تسکیں
‎کھیل سارا مجھے ڈر ہے نہ بگڑ جائے کہی

’’خارِ صحرائے مدینہ نہ نکل جائے کہیں
‎وحشتِ دل نہ پھرا بے سرو ساماں ہم کو‘‘

‎حال کیا سوزِ نہاں سے ہے، نہ کوئی پوچھے
‎اب تو آنسو نہ پئے جائینگے ہائے ہائے
‎دامنِ صبر گیا ہاتھ سے اب تو سُن ل

’’تنگ آئے ہیں دو عالَم تِری بیتابی سے
‎چین لینے دے تپِ سینہِ سوزاں ہم کو‘‘

‎شوق کو پاؤں لگا کر بھی اڑائے نہ بنی
‎سعی کر کر کے تھکے راہ تو پھر بھی نہ کٹی
‎ایسا لگتا ہے کہ تاخیر تھی قسمت میں لکھ

’’پاؤں غربال ہوئے راہِ مدینہ نہ مِلی
‎اے جنوں اب تو مِلے رخصتِ زنداں ہم کو‘‘

‎لذتِ سوزِ نہاں سے رہوں پرکیف سدا
‎فرق آئے نہ مِرے حُسنِ عقیدت میں ذرا
‎آرزو ہے کہ رہے کیفِ مسلسل کی فض

’’میرے ہر زخمِ جگر سے یہ نکلتی ہے صدا
‎اے ملیحِ عربی! کردے نمک داں ہم کو‘‘

‎اپنی دنیا ہے جدا، اپنے الگ ہیں سب کام
‎جامِ الفت سے رہا کرتے ہیں سرشار مُدام
‎قیدِ خلوت میں بھی ہم کو ہے میسر آرا

’’سیرِ گلشن سے اسیرانِ قفس کو کیا کام
‎نہ دے تکلیفِ چمن بلبلِ بستاں ہم کو‘‘

‎حُسنِ طیبہ سے لَڑی آنکھ، مِلا دل کو قرار
‎آنکھ کا تارا ہُوا شہرِ نبی کا ہر خار
‎آنکھ مِلتی ہی نہیں اب تو کسی سے زنہا

’’جب سے آنکھوں میں سمائی ہے مدینہ کی بہار
‎نظر آتے ہیں خزاں دیدہ گلستاں ہم کو‘‘

‎دل کو مِل جائے سکوں دُور یہ کلفت ہو جائے
‎غم مٹیں، چین ملے، توشہِ راحت ہو جائے
‎یا نبی! بہرِ خدا! ہم پہ عنایت ہوجائ

’’گر لبِ پاک سے اقرارِ شفاعت ہو جائے
‎یوں نہ بے چین رکھے جوششِ عصیاں ہم کو‘‘

‎ہر طرف نالہ کشی، آہ و فغاں ٹھہری ہے
‎اِک عجب قہر ہے، سوزش میں عجب تیزی ہے
‎شعلے اٹھتے ہیں بہر لحظہ عجب گرمی ہ

’’نیّرِ حشر نے اِک آگ لگا رکھی ہے
‎تیز ہے دھوپ مِلے سایۂِ داماں ہم کو‘‘

‎خاتمِ چشم ہے طالب تِری اے دُرِّ ثمیں
‎کب سے جلووں کی طلب ہے تِرے، اے مہرِ مبیں
‎در کے سجدوں کے لئے کب سے ہے بیتاب جبی

’’رحم فرمائیے! یا شاہ کہ اب تاب نہیں
‎تابکے خون رُلائے غمِ ہجراں ہم کو‘‘

‎شوق کس درجہ ترقی پہ ہے کیا تجھ سے کہوں
‎ذوقِ دیدار کی ہے نشو ونما روز افزوں
‎دردِ پنہاں سے نہ ہو جائیو! یوں زار و زبو

’’چاک داماں پہ نہ تھک جائیو! اے دستِ جنوں
‎پُرزے کرنا ہے ابھی جیب و گریباں ہم کو‘‘

‎بے کلی حد سے بڑھی اب تو مِلے ہم کو قرار
‎اب تو آجائے خزاں دیدہ گلستاں میں بہار
‎بقعۂِ نُور بنے اب تو ہماری شبِ تا

’’پردہ اُس چہرہِ انور سے اٹھا کر اِک بار
‎اپنا آئینہ بنا اے مہِ تاباں ہم کو‘‘

‎سازِ الفت کے سبھی تارہلانے کے لئے
‎شوقِ دیدار کی آتش کو بڑھانے کے لئے
‎چہچاہٹ سے کلی دل کی کھلانے کے لئ

’’اے رضا وصفِ رُخِ پاک سُنانے کے لئے
‎نذر دیتے ہیں چمن مرغِ غزل خواں ہم کو‘‘

Menu
error: Content is protected !!