کلامِ رضاؔ بریلوی علیہ الرحمہ

ہے کلامِ الٰہی میں شمس الضحیٰ ترے چہرۂ نور فزا کی قسم

تضمین نگار: میرزا امجد راؔزی


تری ذات میں ہیں گم ارض و سما مجھے جلوۂ ذاتِ عما کی قسم
توئی مقسمِ کون و مکاں ہے شہا مجھے وسعتِ نثرِ ھبا کی قسم
نہ نظیر تری نہ مثیل ترا تری وحدتِ بے اجزا کی قسم
’’ہے کلامِ الٰہی میں شمس الضحیٰ ترے چہرۂ نور فزا کی قسم
قسمِ شبِ تار میں راز یہ تھا کہ حبیب کی زلفِ دوتا کی قسم‘‘

تو وہ پیکرِ نور و بشر ٹھہرا ترا رازِ حقیقت کِس پہ کُھلا
ترے وصف خطِ ہر حد سے سوا ادراک کوئی جنہیں چُھو نہ سکا
اے سرورِ عالم صلِّ علیٰ تری رفعتِ ذکر کا کیا کہنا
’’ترے خُلق کو حق نے عظیم کہا تری خِلق کو حق نے جمیل کیا
کوئی تجھ سا ہوا ہے نہ ہو گا شہا ترے خالقِ حسن و ادا کی قسم‘‘

ترا ہر خطِ دست ہے بحرِ عطا ہیں شہانِ زمانہ بھی تیرے گدا
ترے قبضہ میں لوحِ علومِ خفا ترے سامنے خَم قلمِ اعلیٰ
تو ہے صاحبِ سیرِ مقامِ دنیٰ ترے ہاتھ ہے شوکتِ حمد لوا
’’وہ خدا نے ہے مرتبہ تجھ کو دیا نہ کسی کو ملے نہ کسی کو ملا
کہ کلامِ مجید نے کھائی شہا ترے شہر و کلام و بقا کی قسم‘‘

اے صاحبِ گنبدِ خضریٰ نشیں اے قبلہ گہِ امید و یقیں
اے واقفِ جملہ بعید و قریں اے جانِ جہانِ چنان و چنیں
ترے سامنے اے شہِ دنیا و دیں ہے ہستئ اشیا خَم بہ جبیں
’’تری مسندِ ناز ہے عرشِ بریں ترا محرمِ راز ہے روحِ امیں
توئی سرورِ ہر دو جہاں ہے شہا ترا مثل نہیں ہے خدا کی قسم‘‘

میں ہوں سوختہ دل میں شکستہ نوا سرِ نامۂ غم کوئی حرفِ بُکا
تجھے صدقۂ نسلِ آلِ عبا خیرات عطا کر ، کر دے بھلا
ہوں تہی دامان و کاسہ ادا جاں ہجرِ درِ جاناں سے چُھڑا
’’یہی عرض ہے خالقِ ارض و سما وہ رسول ہیں تیرے میں بندہ ترا
مجھے اُن کے جوار میں دے وہ جگہ کہ ہے خلد کو جس کی صفا کی قسم‘‘

مرے وردِ زباں تمجید و ثنا تری نعمتوں پر ہے شکر ادا
احسان ترا ہے مجھ پہ بڑا کِیا امّتِ احمد میں پیدا
اب نقشِ حسرت میرا مٹا میں ہوں منگتا ترا تو مرا داتا
’’تو ہی بندوں پہ کرتا ہے لطف و عطا ہے تجھی پہ بھروسا تجھی سے دعا
مجھے جلوۂ پاک رسول دکھا تجھے تیرے ہی عزّ و علا کی قسم‘‘

تو ہے خالق ہر جزو و کُل کا وہ ہیں شافعِ بزمِ روزِ جزا
تری ذات سمیعِ صوت و صدا وہ ہیں قاسمِ جملۂ جود و سخا
نہ شریک تھا تیرا نہ کوئی ہوا نہ ہی مثل اُن کا کبھی تھا نہ ہوا
’’مرے گرچہ گناہ ہیں حد سے سوا مگر اُن سے امید ہے تجھ سے رجا
تو رحیم ہے اُن کا کرم ہے گواہ وہ کریم ہیں تیری عطا کی قسم‘‘

کوئی اُس سا کہاں ، دیکھا ہے جہاں ، ہے اُسی کے ہی نام کا سکّہ رواں
وہ ہے ایسی زباں سب اہلِ زباں جسے کہتے ہیں حجّتِ لفظ و بیاں
اے میرے فصیح و شوخ جواں سُن کان کُھلے رازؔئ زماں
’’یہی کہتی ہے بلبلِ باغِ جناں کہ رؔضا کی طرح کوئی سحر بیاں
نہیں ہند میں واصفِ شاہِ ھدیٰ مجھے شوخئ طبعِ رضا کی قسم‘‘

Menu
error: Content is protected !!