کلامِ رضاؔ بریلوی علیہ الرحمہ

 سرور کہوں کہ مالکو مولا کہوں تجھے

تضمین نگار: نسؔیم بستوی (ہند)


سلطانِ بزمِ ملتِ بیضا کہوں تجھے
رشکِ مسیح و نازشِ موسٰی کہوں تجھے
مسندنشینِ عرشِ معلٰی کہوں تجھے
’’ سرور کہوں کہ مالکو مولا کہوں تجھے
باغِ خلیل کا گلِ زیبا کہوں تجھے‘‘

جی چاہتا ہے عزم کوئی باصفا کروں
رخ جانبِ دیارِ حبیبِ خدا کروں
روضہ پہ تیرے عرضِ دلِ بے نوا کروں
’’مجرم ہوں اپنے عفو کا ساماں شہا کروں
یعنی شفیع روزِ جزا کا کہوں تجھے‘‘

اے مہ جبینِ بزمِ رسل! نازِ دلبری
بخشی ہے حق نے تجھ کو دو عالم کی سروری
معمور ترے ذکر سے ہے خشکی و تری
’’تیرے تو وصف عیبِ تناہی سے ہیں بری
حیراں ہوں میرے شاہ میں کیا کیا کہوں تجھے‘‘

جو سوچیے، ہے اس سے فزوں شانِ مصطفٰے
افضل نہیں ہے ان سے کوئی بعدِ کبریا
یوں تو ہیں بے شمار مراتب ترے شہا
’’لیکن رضؔا نے ختم سخن اس پہ کردیا
خالق کا بندہ خلقکا آقا کہوں تجھے

Menu
error: Content is protected !!